Experience YourListen.com completely ad free for only $4 a month. Upgrade your account today!

Yun Di Hamein Aaazaadi [newspodcasts |20…16-08-15]

  • played 23.04 K times
  • uploaded
  • in Podcasts
Embed Code (recommended way)
Embed Code (Iframe alternative)
Please login or signup to use this feature.

Yun Di Hamein Aaazaadi

Yun di hamain aazaadi key dunya huyi hairan
Aye Quaid-e-Azam tera ahsaan hai ahsaan

Har simt musalmanon peh chayi thi tabahi
Mulk apna tha aur ghairon kay hathon mein thi shahi

Aisay mein utha, deen muhmmad (S.A.W) ka sipahi
Aur naara’e takbeer se di tu nay gawahi

Islam ka jhanda liye aaya sar-e-maidan
Aye Quaid-e-Azam tera ahsaan hai ahsaan

Dekha tha jo iqbal ne ik khowab sohana
Is kowab ko aik roz haqeeqat hai banana

Ye soncha jo tu ne hansa tujh pe zamana
Har hal se chaha tujhay dushman ne harana

Mara wo tu ne daao keh dushman bhi liye maan
Aye Quaid-e-Azam tera ahsaan rahey ahsaan

Larne ko dushman se ajub dhung nikala
Na toap nah bandooq nah talwar nah bhala

Sachai kay anmol, osulon ko sanmbhala
Panhan tere paigham mein jadoo tha nirala

Imaan waley chal paray sun kar tera farmaan
Aye Quaid-e-Azam tera ahsaan rahey ahsaan

Punjab kay bangal kay jawan chal paray
Sindhi, Blochi, Sarhad Paithan chal paray

Ghar baar chor kay sar-o-samaan chal paray
Sath apney muhajir liye Quraan chal paray

Aur Quid millat bhi chaley hone ko qurbaan
Aye Quaid-e-Azam tera ahsaan rahey ahsaan

Naqsha badal kay rakh dia is mulk ka tu ne
Sayah tha Muhammad (S.A.W) ka Ali ka taare sar peh

Dunia se kaha tu nay koyi hum se nah uljhay
Likha hai is zameen ko shaheedon nay laho se

Aazad hain aazaad rahain ge yeh musalman
Aye Quaid-e-Azam tera ahsaan rahey ahsaan

یوں دی ہمیں آزادی کہ دنیا ہوئی حیران
اے قائد اعظم تیرا احسان ہے احسان
اے قائد اعظم تیرا احسان ہے احسان
تیرا احسان ہے تیرا احسان
ہر سمت مسلمانوں پہ چھائی تھی تباہی
ملک اپنا تھا اور غیروں کے ہاتھوں میں تھی شاہی
ایسے میں اٹھا دین محمد کا سپاہی
اور نعرہ تکبیر سے دی تو نے گواہی
اسلام کا جھنڈا لیے آیا سر میدان
اے قائد اعظم تیرا احسان ہے احسان
تیرا احسان ہے تیرا احسان
دیکھا تھا جو اقبال نے اک خواب سہانا
اس خواب کو اک روز حقیقت ہے بنانا
یہ سوچا جو تو نے تو ہنسا تجھ پہ زمانہ
ہر چال سے چاہا تجھے دشمن نے ہرانا
مارا وہ تو نے داؤ کہ دشمن بھی گئے مان
اے قائد اعظم تیرا احسان ہے احسان
تیرا احسان ہے تیرا احسان
لڑنے کا دشمنوں سے عجب ڈھنگ نکالا
نہ توپ نہ بندوق نہ تلوار نہ پھالا
سچائی کے انمول اصولوں کو سنبھالا
پنہاں تیرے پیغام میں جادو تھا نرالا
ایمان والے چل پڑے سن کر تیرا فرمان
اے قائد اعظم تیرا احسان ہے احسان
تیرا احسان ہے تیرا احسان
پنجاب سے بنگال سے جوان چل پڑے
سندھی ، بلوچی ، سرحدی پٹھان چل پڑے
گھر بار چھوڑ بے سرو سامان چل پڑے
ساتھ اپنے مہاجر لیے قرآن چل پڑے
اور قائد ملت بھی چلے ہونے کو قربان
اے قائد اعظم تیرا احسان ہے احسان
تیرا احسان ہے تیرا احسان
نقشہ بدل کے رکھ دیا اس ملک کا تو نے
سایہ تھا محمد کا ، علی کا تیرے سر پہ
دنیا سے کہا تو نے کوئی ہم سے نہ الجھے
لکھا ہے اس زمیں پہ شہیدوں نے لہو سے
آزاد ہیں آزاد رہیں گے یہ مسلمان
اے قائد اعظم تیرا احسان ہے احسان
تیرا احسان ہے تیرا احسان
ہے آج تک ہمیں وہ قیامت کی گھڑی یاد
میت پہ تیری چیخ کے ہم نے جو کی فریاد
بولی یہ تیری روح نہ سمجھو اسے بیداد
اسلام زندہ ہوتا ہے ہر کربلا کے بعد
اسلام زندہ ہوتا ہے ہر کربلا کے بعد
گر وقت پڑے ملک پہ ہو جائیے قربان
اے قائد اعظم تیرا احسان ہے احسان
تیرا احسان ہے تیرا احسان

Licence : All Rights Reserved


X