Experience YourListen.com completely ad free for only $4 a month. Upgrade your account today!

اک ایسا گھر چاہیئے مجھ…کو جس کی فضہ مستانہ ہو سازینہ ظفر

Embed Code (recommended way)
Embed Code (Iframe alternative)
Please login or signup to use this feature.


اک ایسا گھر چاہیے مجھ کو ، جس کی فضا مستانہ ہو
اک کونے میں غزل کی محفل اک کونے میں مے خانہ ہو

ایسا گھر جس کے دروازے ، بند نہ ہوں انسانوں پر
شیخ و برہمن ، رند و شرابی سب کا آنا جانا ہو

اک تختی انگور کے پانی سے لکھ کر در پر رکھ دو
اس گھر میں وہ آئے جس کو صبح تلک نہ جانا ہو

جو مے خوار یہاں آتا ہے اپنا مہماں ہوتا ہے
وہ بازار میں جا کر پی لے جس کو دام چکانا ہو

پیاسے ہیں ، ہونٹوں سے کہنا کتنا ہے آسان ظفر
مشکل اس دم آتی ہے جب آنکھوں سے سمجھانا ہو
ظفر گورکھپوری

Licence : All Rights Reserved


X